Asseerah
Change the Education to Change the World
×

Type to start your search

In Search of Safe Spaces for Children

In Search of Safe Spaces for Children

By Jawed Anwar

(Urdu Translation is below)

On July 15th, we rallied for Haya Day in Mississauga, Ontario. And on August 19th, we organized the School Education Conference 2023 in Richmond Hill. The purpose was for parents to understand what is being taught in public schools, what their children are learning, and how their education and upbringing will shape them.

Congratulations to those who listened to the message understood it, and took action. They are the real winners. Those who have not yet decided and are still in the planning stages, at least send a letter to the public school stating that your child will be homeschooled. Withdraw them from public school. Then, you can plan accordingly.

Now, several excellent and reputable Islamic schools have started online teaching. If you cannot enroll your child in school, consider online classes. Homeschooling is also available to you, and homeschooling (or unschooling) can be the best option now.

Your children are your treasures, more valuable than jewels or possessions. Protect them from being lost. Those who argue that a good home environment will solve everything are mistaken. While maintaining a positive home environment is essential, this argument is akin to saying that you can throw your child into a fire for seven hours, bring them home, cool them down, or immerse them in a dirty swamp for seven hours and clean them up at home. Or, it's like spending five days a week in nightclubs or bars and thinking that by keeping your child at home for the remaining two days, you'll purify them.

Your argument goes against educational principles, psychology, natural laws, and observation. Miracles do not happen in the real world.

What is happening in public schools? Watch the videos available on our As-Seerah YouTube channel. Phil Lees presented just a glimpse of what’s happening in public schools.

Sending your children to public schools is worse than throwing them into a fire, a dirty swamp, or a bar.

If your son or daughter has absorbed the Gender Identity Theory taught in schools, where they are told they can be a boy in a girl's body or vice versa or that gender is fluid and can change at any time, they may lose faith. They may deviate from Islam because they will contradict the principles and guidance of the Quran. The direct responsibility will be on you as parents.

Suppose you have become entangled in the world and materialism, surrounded by worldly-minded people, and have taken advice from friends and counsellors who are materialist and carefree about your children's education. In that case, it is shocking news for us.

You should also know that in terms of worldly success, public school children do not excel. Those children who are made into sexual beings from an early age are confused about gender, engage in countless sexual relationships before marriage, and will not have the mental and intellectual capacity to succeed in any field. Public schools were already terrible; now they have become a special kind of hell.

Thank you to those who participated in the Haya Day parade on July 25th. Now, on September 20th, please join the Million Person March. But before going to any battle, the first principle is to ensure the safety and security of your family and children. Your first step should be to remove your children from public schools and place them in a safe, educational environment.

Understand that what is being taught today in schools regarding sex and gender is the result of decades of effort. It cannot be changed overnight. It will require a long, intellectual, political, and social struggle.

Education is a great thing, but it can also be perilous. Education works like acid.

Allama Iqbal says:

Dip Self in the acid of education

And mould it to your liking with careful manipulation

This acid can be more potent than most

Turning a mountain of gold into mere dust and a ghost

بچوں کے محفوظ مقام  کی تلاش

جاوید انور

ہم نے 15جولائی کو مسی ساگا، اونٹاریو میں  حیا ڈے پریڈ کیا۔  اور رچمنڈ ہل میں  اگست 19کو  اسکول ایجوکیشن  کانفرنس۔ مقصد یہ تھا کہ والدین خوب اچھی طرح جان لیں کہ  پبلک اسکولوں میں ان کے بچوں کو کیا پڑھایا جا رہا ہے، کیا سکھایا جا رہا ہے۔ ان کی تعلیم و تربیت کے نتیجہ میں ان کا بچہ کیسا انسان بنے گا یا بن سکتا ہے۔

وہ لوگ مبارکباد کے مستحق ہیں جنھوں نے پیغام کو سنا ، سمجھا، اور اس پر عمل کیا۔۔وہ لوگ جنھوں نے پبلک اسکول چھوڑ کر متبادل  تعلیمی نظام میں  آگئے   وہی فاتح  ہیں۔ خواہ آپ نے اسلامی اسکول، دینی مدرسہ یا  ہوم اسکولنگ  کا  کوئی بھی راستہ چنا ہو    اور جنھوں نے ایسا نہیں کیا۔  انھوں نے اپنے بچوں کو ایک بہت بڑے  خطرناک رسک میں ڈال دیا ہے۔ میں اب بھی کہوں گا کہ کہ اگر آپ نے اب تک کوئی ایسا فیصلہ نہیں کیا ہے  اور ابھی آپ پلاننگ کے مراحل میں ہیں تو کم از کم آپ یہ کریں کہ آپ پبلک اسکول   کو ایک  لیٹر بھیج دیں کہ آپ کا بچہ ہوم اسکولنگ کرے گا۔ اسے پبلک اسکول سے نکا ل لیں۔ پھر آپ  بیٹھ کر  آرام سےپلاننگ کر لیں۔

اب کئی اچھے اور مستحکم   اسلامی اسکول نے  آن لائن  ٹیچنگ شروع کر دی ہے۔ اگر آپ کو  اسکول میں داخلہ نہیں ملا تو  آپ آن لائن کلاسیز کے لئے داخلہ لے لیں۔ اور  ہوم اسکولنگ کا آپشن تو آپ کے پاس موجود ہے ہی۔ اور اس وقت ہوم اسکولنگ سب سے بہترین آپشن ہو سکتا ہے۔

آپ کے بچے آپ کے ہیرے، جواہرات اور تمام قیمتی چیزوں کے مقابلہ میں بہت زیادہ قیمتی ہیں۔ اسے ضائع ہونے سے بچا لیجیے۔ جن لوگوں کی یہ دلیل ہے کہ گھر کا ماحول اچھا رکھا جائے تو سب ٹھیک ہو جائے گا وہ بہت بڑی غلطی پر ہیں۔ گھر کا ماحول تو آپ کو ہر حال میں اچھا  رکھنا ہی ہے۔ لیکن یہ دلیل ایسی ہے کہ جیسے آپ کہیں کہ بچوں کو  سات گھنٹہ آگ میں جلا کر  گھر میں لاکر آگ ٹھنڈی کر لیں گے، یا  بچے کو کسی گندے کیچڑ کے تالاب میں سات گھنٹہ ڈبکیاں لگوا کر اسے گھر لا کر پاک صاف کر دیں گے۔ یا آپ یہ کہ رہے ہیں کہ  ہفتہ  میں پانچ دن نائٹ کلب یا شراب خانے میں  ہر روز سات گھنٹہ رکھ کر آپ بچے  کو  گھر لا کر  اسے پاکیزہ بنا ئیں گے۔

آپ کی دلیل تعلیمی اصول، نفسیات، طبعی اصول ، اور تجربات  اور مشاہدہ کے خلاف   ہے۔ عملی دنیا میں ایسے معجزات  واقع نہیں ہوتے ہیں۔

پبلک اسکولوں  میں کیا ہو رہا ہے۔ ہمارے   السیرہ یو ٹیوب چینل پر موجود  فل لیز کا ویڈیو دیکھ لیں۔ جو کچھ پبلک

اسکو لوں  میں ہو رہا ہے  اس میں اس کی  اس کی ایک ہلکی سی جھلک ہے۔ میں کہوں گا کہ  اپنے بچوں کو پبلک اسکول میں بھیجنا انھیں آگ میں پھینکنے سے،  گندے کیچڑ میں پھینکنے سے،  شراب خانوں میں بٹھانے سے بدتر ہے۔

اگر  آپ کے بیٹے یا بیٹی نے اسکول کی     Gender Identity Theoryسے یہ سبق لے کر  لڑکے کے جسم میں لڑکی اور   لڑکی کے جسم میں لڑکا  ہو سکتا ہے ۔ او رصنف     (Gender)    ایک سیال)  (Fluid   چیز ہے  ، کسی وقت بدلا جا سکتا ہے,اگر اسے  ایمان کا حصہ بنا لیا تو وہ اسلام سے نکل جائے گا۔  کیونکہ وہ   قرآن کے اصول  اور ہدایت سے نکل گیا۔ور اس کی براہ راست ذمہ داری  آپ پر یعنی   والدین پرہوگی۔

اگر آپ پر دنیا اس قدر سوار ہو چکی ہے اور  مادہ پرستی   نے آپ کو آ گھیرا ہے ۔ اور آپ نے اپنے تمام  دوست اور مشیر دنیا پرستوں کی بنا لی ہے  اور  اپنے بچوں کی تعلیم کے حوالہ سے آپ بے فکر ہیں تو میں  آپ کو ایک ہولناک مستقبل کی خبر دیتا ہوں۔

آپ کو یہ بھی معلوم ہونا چاہیے کہ دنیا کہ لحاظ سے بھی     پبلک اسکول کے بچے کامیاب نہیں ہو پائیں گے۔ جن بچوں کو  ابتدائی عمر سے  جنسی حیوان بنا  دیا جائے گا اور  صنف  (Gender)کے حوالے سے کنفیوز کر دیا جائے گا اور شادی سے قبل ہی  بے شمارجنسی تعلقات میں ملوث ہو جائے گا اس کی دماغی اور ذہنی صلاحیت ایسی ہو ہی نہیں سکتی کہ وہ دنیا کے کسی میدان میں کامیاب ہو سکے۔ یہ پبلک اسکولز پہلے سے بھی بہت خراب تھے، اور اب تو   خاص طور پر جہنم بن چکے ہیں۔

آپ25  جولائی  کوحیا ڈے پریڈ میں آئے بہت بہت شکریہ۔ اب  آپ    20 ستمبر کوملین مارچ میں جائیں۔آپ احتجاج اور ریلی کریں۔ لیکن ہر  جنگ میں جانے سے پہلے پہلا اصول یہ ہے کہ اپنی فیملی اور اپنے بچوں کو  محفوظ مقام پر پہنچایا جائے۔ یعنی آپ کا پہلا قدم یہ ہونا چاہیے کہ  آپ اپنے بچوں کو پبلک اسکول  سے نکال کر محفوظ تعلیمی ماحول میں پہنچائیں۔

آپ جان لیں جو کچھ  جنڈر کے حوالہ سے  آج اسکولوں میں پڑھایا جا رہا ہے وہ کم از کم  پچاس سا ٹھ سال کی کوششوں کا نتیجہ ہے۔ اسے راتوں  رات بدلا نہیں جا سکتا  اس کے لیے بہت طویل  علمی، سیاسی اور سماجی جنگ لڑنی پڑے گی۔

تعلیم بہت اچھی چیز ہے وہیں بہت خطرناک ہے۔  تعلیم تیزاب   کی طرح کام کرتا ہے۔

علامہ اقبال کہتے ہیں  کہ :

تعلیم کی  تیزاب میں ڈال اس کی خودی کو

ہو جائے ملائم تو جدھر چاہے اسے پھیر

تاثیر میں اکثیر سے بڑھ کر ہے یہ تیزاب

سونے کا ہمالہ ہو تو مٹی کا ہے اک ڈھیر

LEAVE A REPLY

Recent posts

  • Parents, Act Now: This Weekend's PC Policy Conference – Reach Out to Your PC MPPs

    Parents, Act Now: This Weekend's PC Policy Conference – Reach Out to Your PC MPPs

    30 January 2024
  • FIX it Now: A One-Year Public School Protest

    FIX it Now: A One-Year Public School Protest

    23 September 2023
  • One Million March for Children, New Gender Identity in Schools

    One Million March for Children, New Gender Identity in Schools

    18 September 2023
  • LESSON: A Father Lost Her Girl in the School's Gender Identity Theory

    LESSON: A Father Lost Her Girl in the School's Gender Identity Theory

    04 September 2023
  • Talking Points for MPPs, Education Minister, and Premier

    Talking Points for MPPs, Education Minister, and Premier

    31 August 2023
  • Save our Kids-Save our Future: Our Precious Kids in Public Schools

    Save our Kids-Save our Future: Our Precious Kids in Public Schools

    10 August 2023